preloader
بلڈ پریشر کے علاج کے متعلق غلط فہمیاں

بلڈ پریشر کے علاج کے متعلق غلط فہمیاں

-کیا بلڈ پریشر کی دوائی کھانے سے اس کی عادت ہو جاتی ہے؟
بلڈ پریشر ایسی بیماری ہے جس کا مکمل علاج ابھی موجود نہیں ہے، لہذا بلڈ پریشر کم کرنے کی دوائی روزانہ مستقل لینا بے حد ضروری ہے ورنہ بلڈ پریشر دائمی طور پر بڑھے رہنے سے مختلف اعضاء میں بہت سی پیچیدگیاں ہوسکتی ہیں جن میں دل دماغ گردے اور آنکھیں شامل ہیں۔

-مجھے بیماری کی کوئی علامت نہیں ہوتی۔ میں کیوں بلڈپریشر کی دوا کھاؤں؟

یہ ایک ایسی بیماری ہے جس کی کوئی علامت نہیں ہوتی مگر یہ اندر جسم کے اعضاء کو نقصان پہنچارہی ہوتی ہے۔ مریض اپنے آپ کو بالکل تندرست سمجھتا ہے اور ڈاکٹر کے انتباہ کے باوجود دوا استعمال نہیں کرتا۔ اس سے کسی بھی وقت بڑے نقصان کا سامنا ہو سکتا ہے جیسے اچانک دل کا دورہ پڑ جانا، فالج ہو جانا، گردوں کا ناکارہ ہوجانا یا اندھاپن وغیرہ۔
-جب مجھے سر میں درد ہوتا ہے یا چکر آتے ہیں گولی کھا لیتی ہوں یا زبان کے

 نیچے گولی رکھ لیتی ہوں؟

بلڈ پریشر کی دوائی روزانہ لینا ضروری ہے۔ کبھی کبھی سر درد چکر کی صورت میں دوائی لینے کا طریقہ بالکل بھی درست نہیں ہے۔ماہر معالج کے مشورے کے مطابق باقاعدہ بلڈ پریشر کی دوائی استعمال کریں اور صحت مند زندگی گزاریں۔
مذید معلومات یا ڈاکٹر سے معائنے کے لئے رابطہ کریں۔.

Author

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *